Support service
×

باب 19 جارج سوروس: مایہ ناز سرمایہ کار کی کامیابی کی کہانی

 

 

زندگی کے ہر شعبے کی طرح فاریکس میں بھی ایسے شاندار افراد موجود ہیں جن کے نام تاریخ میں نیچے چلے گئے۔ جارج سوروس فاریکس کی تاریخ کے سب سے کامیاب تاجروں میں سے ایک ہیں۔ ان کے کیریئر کا آغاز 1969 میں کوراکاو (بحیرہ کیریبین میں نیدرلینڈز انٹیلیز) پر کوانٹم فنڈ کے قیام سے ہوا۔ اپنے وجود کے دوران کوانٹم فنڈ نے فاریکس پر بہت سے منافع بخش قیاس آرائیوں کے کام کیے۔ مثال کے طور پر، صرف 1996 میں اسپاٹ مارکیٹ میں، فنڈ نے میک ڈونالڈز کارپوریشن کی سالانہ آمدنی کے برابر منافع کمایا۔ تاہم جارج سوروس کا سب سے معروف معاہدہ 1992 میں ہونے والی پاؤنڈ اسٹرلنگ کی تجارت ہے۔ اس کے نتیجے میں انہیں ایک ماہ کے اندر 2 ارب ڈالر کا خالص منافع حاصل ہوا تھا۔ اس شاندار کامیابی اور اس کے پس منظر کی وجہ سے جارج سوروس نے "اس شخص کی شہرت حاصل کی جس نے بینک آف انگلینڈ کو توڑا"۔

جارج سوروس 90 کی دہائی میں دنیا کی صورتحال کے لئے اتنا حیران کن منافع کے حامل ہیں۔ 1979 میں جرمنی اور فرانس نے یورپی مالیاتی نظام (ای ایم ایس) کے قیام کا آغاز کیا۔ ای ایم ایس نظام میں حصہ لینے والے ممالک کی قومی کرنسی کی شرحوں کے استحکام کو برقرار رکھنے اور کرنسی انضمام کی تیاری کے لئے بنایا گیا تھا۔ اصل میں ای ایم ایس جرمنی، فرانس، اٹلی، نیدرلینڈز، بیلجیم، ڈنمارک، آئرلینڈ اور لکسمبرگ پر مشتمل تھا۔ ای ایم ایس کے بنیادی حصے کرنسی ریٹس (یورپین ایکسچینج ریٹ میکانزم (ای آر ایم) کو ریگولیٹ کرنے کا طریقہ کار یورپی کرنسی یونٹ ای سی یو کے تعارف پر مبنی تھا جو معاصر یورو (یورو) کا پروٹو ٹائپ تھا۔ مرکزی شرح بمقابلہ ای سی یو کی قائم کردہ شرخ۔ اس کے علاوہ کرنسی کی قیمت کی حد (ایک راہداری) جس کے اندر کرنسی کی شرح تبادلہ میں اتار چڑھاؤ کی اجازت تھی، ہر ای ایم ایس رکن کے لئے مقرر کی گئی تھی۔ شرکاء معاہدے کی شرائط کے تحت کسی بھی طرح اپنی قومی کرنسی کی شرح برقرار رکھنے یا نظام چھوڑنے کے پابند تھے۔ چارٹر کے مطابق ای ایم ایس شرکاء کی مرکزی شرحوں میں تبدیلی کی جاسکتی ہے۔ یہ 1979 سے 1987 تک 9 بار ہوا۔

 سال 1990 میں گریٹ برطانیہ نے ای ایم ایس میں شمولیت اختیار کی اور برطانوی پاؤنڈ (جی بی پی) کی شرح تبادلہ 2.95 ڈوئچے مارک (ڈی ای ایم) مقرر کی گئی جس میں برداشت شدہ راہداری ± 6 فیصد تھی۔ 1992 کے وسط تک ای آر ایم کی بدولت ای ایم ایس میں حصہ لینے والے یورپی ممالک میں افراط زر کی شرح میں نمایاں کمی واقع ہوئی۔ اس کے باوجود کرنسی کوریڈور کے اندر کرنسی کی شرحوں کی عارضی دیکھ بھال نے سرمایہ کاروں میں شکوک و شبہات پیدا کردئیے۔ 1989 میں مغربی اور مشرقی جرمنی کے دوبارہ ملنے کے بعد صورتحال مزید خراب ہوگئی۔ مشرقی جرمنی کی معیشت کی کمزوری نے حکومتی اخراجات میں زبردست توسیع کی جس کی وجہ سے بنڈسے بینک کو مزید رقم جاری کرنے پر مجبور ہونا پڑا۔ اس پالیسی کے نتیجے میں افراط زر میں اضافہ ہوا اور بنڈسے بینک نے اہم شرح سود بڑھا کر اس کا جواب دیا۔ ذیادہ  شرح سود نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کو راغب کیا۔

اس کے نتیجے میں ڈوئچے مارک کی زبردست مانگ پیدا ہوئی جس نے اس کی قدر کو واضح طور پر بڑھا دیا -  گریٹ برطانیہ کو ای ایم ایس معاہدے کا پابند ہونے کی وجہ سے کرنسی کوریڈور بمقابلہ ڈوئچے مارک کی مقررہ حدود میں اپنی قومی کرنسی کی شرحوں کو برقرار رکھنا پڑا۔ اُس وقت برطانوی معیشت شدید مشکلات کا شکار تھی۔ برطانیہ میں بے روزگاری کی شرح بڑھ رہی تھی۔ بینک آف انگلینڈ نے جرمنی کے بنڈسے بینک کے مقدمے کے بعد شرح سود بڑھانے کی جرات نہیں کی کیونکہ اس اقدام سے ایسے حالات میں صورتحال مزید خراب ہوسکتی تھی۔ لیکن قریبی مدت میں گھریلو کرنسی کی شرح کو مضبوط بنانے کے کوئی اور امکانات نہیں تھے۔ اس وقت جارج سوروس اور بہت سے دیگر سرمایہ کاروں نے غور کیا کہ برطانیہ مطلوبہ سطح پر گھریلو کرنسی کی شرح برقرار نہیں رکھ سکے گا اور اسے یا تو اپنی قدر میں کمی کا اعلان کرنا پڑے گا یا ای آر ایم سے دستبردار ہونا پڑے گا۔

جارج سوروس نے پاؤنڈ (جی بی پی) ادھار لینے، انہیں ڈوئچے مارکس (ڈی ای ایم) کے لیے فروخت کرنے اور جرمن اثاثوں میں سرمایہ کاری کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس کے نتیجے میں تقریبا جی بی پی 10 ارب فروخت ہوئے۔ جارج سوروس اکیلے اس طرح نہیں سوچ رہے تھے، بہت سے سرمایہ کاروں نے ان کی مثال پر عمل کیا۔

اس طرح کی قیاس آرائیوں کے نتیجے میں برطانیہ میں غیر مستحکم معاشی صورتحال اور بھی خراب ہو گئی۔ صورتحال کو درست کرنے اور کرنسی کی شرح بڑھانے کی کوشش میں بینک آف انگلینڈ نے اپنے ذخائر کے لئے تقریبا 15 ارب جی بی پی دوبارہ خریدے۔ لیکن اسے  متوقع مقصد حاصل نہ ہو سکتا تھا۔ پھر 16 ستمبر 1992 کو جسے مزید "بلیک بدھ" کہا گیا کو بینک آف انگلینڈ نے اعلان کیا کہ اس نے شرح سود 10 فیصد سے بڑھا کر 12 فیصد کر دی ہے۔ ریگولیٹر مشکل حالات کو پرسکون کرنا چاہتا تھا لیکن یہ مرکزی بینک کے عہدیداروں کی توقعات کے مطابق نہ تھا۔

وہ سرمایہ کار، جنہوں نے پاؤنڈ فروخت کیے تھے، کو یقین تھا کہ اس کی قیمت میں مزید کمی کے بعد انہیں بھاری منافع حاصل ہوگا۔ چند گھنٹوں بعد بینک آف انگلینڈ نے شرح سود 15 فیصد تک بڑھانے کا ارادہ ظاہر کیا لیکن تاجر پاؤنڈ فروخت کرتے رہے۔ یہ سلسلہ اسی دن کے 19:00 بجے تک جاری رہا۔ بعد ازاں ٹریژری کے چیف سیکرٹری نارمن لامونٹ نے اعلان کیا کہ گریٹ برطانیہ نے یورپی شرح تبادلہ میکانزم (ای آر ایم) چھوڑ دیا ہے اور شرح سود کم کرکے 10 فیصد کر دی ہے اس دن سے پاؤنڈ کی شرح ٹیل سپن میں چلی گئی۔ یہ ڈوئچے مارک کے مقابلے میں 15 فیصد اور 5 ہفتوں کے اندر امریکی ڈالر کے مقابلے میں 25 فیصد تک گر گیا۔ اس سے کوانٹم فنڈ کو ایک بڑا منافع ہوا۔ صرف ایک ماہ کے اندر جارج سوروس نے جرمن اثاثوں کے لئے نمایاں سستے پاؤنڈ خریدنے کے لئے تقریبا 2 ارب امریکی ڈالر حاصل کیے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ ستمبر 1992 میں پاؤنڈ میں تقریبا 3000 پپس کی کمی واقع ہوئی

اس طرح جارج سوروس نے "بینک آف انگلینڈ توڑنے والے شخص" نے دکھایا کہ مصنوعی طور پر برقرار کرنسی کی شرحوں کے حالات میں مرکزی بینک کس حد تک بڑے سرمایہ کاروں کی کرنسی قیاس آرائیوں کا شکار ہو سکتے ہیں۔ ادھار فنڈز نے جارج سوروس کو صرف چند ہفتوں کے اندر دولت اکٹھا کرنے کے قابل بنایا جس سے ان کے خیراتی کاموں کا دروازہ کھل گیا۔ ملکی معیشت پر کرنسی کی قیاس آرائیوں کے منفی اثر کو روکنے کے لئے مرکزی بینک غیر ملکی اثاثوں میں ذخائر پیدا کرتے ہیں۔ لیکن جیسا کہ عملا ظاہر  ہے، اس طرح کے ذخائر غیر موثر ہو سکتے ہیں کہ اگر وہ سرمایہ کاروں کے بڑی سرمایہ کاری کے خلاف ہوں، جن کا مقصد ایک ہی ہے۔

آج فاریکس 90 کی دہائی کے آغاز کے مقابلے میں کہیں زیادہ لیکوڈیٹ ہے۔ اس لئے کوئی سرمایہ کار، یہاں تک کہ ایک ارب سرمایہ رکھنے والا بھی طویل عرصے تک کسی بھی کرنسی کی شرح پر اثر انداز نہیں ہو سکتا۔ ستمبر 1992 کا "سیاہ بدھ" بہت پیچھے رہ گیا ہے، لیکن تاریخی حقائق کو نظر انداز نہیں کیا جانا چاہئے، کیونکہ تاریخ میں اپنے آپ کو دہرانے کا رجحان ہے۔


اپنی رائے شیئر کریں

آپ کا شکریہ! کیا آپ کچھ شامل کرنا چاہیں گے؟

آپ کو موصول ہونے والے جواب کی درجہ بندی کیسے کریں گے؟

اپنی رائے دیں (اختیاری)

آپ کی رائے ہمارے لیے بہت اہم ہے۔
ہمارا آن لائن سروے مکمل کرنے کے لیے وقت نکالنے کا شکریہ۔

smile""